کسی بھی ریاست کی معیشت کیسے پنپتی ہے؟ How a Country’s Economy Flourishes

nomadthoughtsofeast

nomadthoughtsofeast

 کسی بھی ریاست کے امور کو کامیابی سے آگے بڑھانے کے لئے اس ریاست کی معیشت کلیدی کردار ادا کرتی ہے۔ ہر ریاست میں بہت سی صنعت و حرفت یا انڈسٹریز ہوتی ہیں جن کی مدد سے حکومتیں اور ریاستیں اپنے روزمرہ کے کاموں کے لئے مالی وسائل مہیا کرتی ہیں۔ بہت سے دوسرے ممالک میں بھی ہماری ریاست کی مصنوعات کی مانگ ہو سکتی ہے، چنانچہ ہم اپنی مملکت میں تیار اپنی  ضرورت سے زائد اشیاء کو باہر کے ممالک میں بھیج کر اچھا خاصہ زر مبادلہ بھی کما سکتے ہیں۔

کسی بھی ملک کی معیشت کا پہیہ گھمانے میں اس ملک کی افرادی قوت کا بنیادی کردار ہوتا ہے بلکہ اگر یہ سمجھا جائے تو غلط نہ ہو گا کہ افرادی قوت جتنی پڑھی لکھی، ہنر مند اور قابل ہو گی اتنا ہی ہماری ریاست بہترین مصنوعات وغیرہ تیار کرنے کے قابل ہوگی جن کی کہ دنیا بھر میں مانگ ہو گی۔ تاہم افرادی قوت کے ساتھ ساتھ اور بھی بہت سے عوامل ہوتے ہیں جو کہ معیشت کا پہیہ چلانے میں اہم کردار ادا کرتے ہیں۔

ان اہم عوامل میں سب سے اہم یہ ہے کہ ملک میں نظام حکومت میں استحکام ہو اور ملک کسی اندرونی و بیرونی مخاز آرائی میں کم سے کم ملوث ہو۔ اس بارے چین کی مثال لی جاسکتی ہے جس نے اندرونی و علاقائی مسائل کو سلجھاتے ہوئے ترقی کے نئے افق چھو لئے۔ چین نے اپنی ریاست میں اندرونی طور پر بھی ایک بہتر اور موثر نظام حکومت قائم کرنے کی کاوش کی جو کہ دنیا میں جاری کیپیٹل ازم سے بھی مطابقت بنانے میں کامیاب رہا۔

قابل اور تربیت یافتہ افرادی قوت، اچھے اورمستحکم سیاسی، سماجی اور نظام انصاف کے ساتھ ساتھ ریاست میں نظام زر  اور بینکاری سے متعلقہ شعبہ جات کی اہمیت بھی مانی ہوئی ہے۔ اقبال کے شعر کے مصداق کہ

افراد کے ہاتھوں میں ہے اقوام کی تقدیر

ہر فرد ہے ملت کے مقدر کا ستارہ

سو، بینکاری اور نظام زر کی مدد سے افرادی قوت باآسانی کاروباری قرضہ جات حاصل کرکے نہ صرف یہ کہ نئے کاروبار شروع کر سکتی ہے بلکہ کاروباری لوگ اپنے کاروبار میں مزید سرمایہ داخل کرکے انہیں نئی بلندیوں تک لے جاسکتے ہیں جس سے ریاست کی مجموعی آمدن اس حد تک بڑھ جاتی ہے کہ پھر ریاست اور حکومت اپنے عوام کے لیئے ایک فلاحی معاشرےکے خواب کو شرمندہ تعبیر کرنے کے لیئے بہت سے مالی وسائل بھی بروےٗ کار لا سکتی ہے۔

Author

  • Freelance Accountant, Full Charge Bookkeeper, Financial Analyst, and Ex Banker with 15 Years of Professional Experience. Also a Blogger...

Related Post