ٹرمپ ازم، سیکولر ازم اور مذاہب Trumpism, Secularism and the Religions

trumpism

trumpism

دنیا بھر میں جمہوری سوچ سمجھ رکھنے والے لوگوں کے نزدیک ٹرمپ ازم کا مطلب ہے، “جس کی لاٹھی اس کی بھینس”۔ جس کا مطلب یہ ہے کہ ہر حالت میں قوت اور اقتدار کے ایوانوں پر قابض ہوا جائے۔ اس عمل کے دوران ٹرمپ ازم پر کارفرما لوگ کبھی مذہب کا لبادہ اوڑھیں گے اور کبھی سیکولرازم اور جمہوریت کا الاپ گائیں گے۔ تاہم درحقیقت ٹرمپ ازم کے پیروکار ناہی کسی مذہب کے حقیقی کاربند ہیں اور نہ ہی کسی جمہوریت شمہوریت کے۔

ٹرمپ ازم کے پیرو دراصل اپنے نفس کے پجاری ہیں اور اپنی نفسانی خواہشات کی تسکین کے لئے اقتدار اور طاقت کے ایوانوں پر ہر حال میں قبضہ کرنے کی ٹھانے ہوئے ہیں۔ ٹرمپ ازم کے پیر و دنیا کے ہر ملک اور ہر خطہ میں وافر موجود ہیں۔ سیکولر ازم کو دیکھیں تو ان کے نزدیک “جس کی لاٹھی اس کی بھینس’، لیکن لاٹھی اس کی جو سائنسی اصولوں کے تحت لاٹھی حاصل کرنے کا حقدار قرار پا جائے۔

سیکولر ازم میں لاٹھی اسی کو پکڑائی جاتی ہے جو دنیاوی علوم و فنون کے لحاظ سے بے مثل سمجھا جاتا ہو اور اسے دنیا کے بہت سے علوم و فنون میں مہارت حاصل ہو۔مذاہب کو دیکھیں تو ان کے نزدیک بھی، “جس کی لاٹھی اسی کی بھینس”۔ تاہم اس لاٹھی کا حقدار مذاہب کے نزدیک وہی ہے جس کو یہ حق سماوی علوم کے تحت عطا کیا گیا ہو۔ اگر دین اسلام کو دیکھا جائے تو لاٹھی کا حقدار وہی جو اللہ کے ذیادہ نزدیک ہے اور اللہ کے نزدیک ذیادہ وہی ہے جو تقویٰ کی صفات میں دوسروں سے بڑھ کر ہے۔

Author

  • Freelance Accountant, Full Charge Bookkeeper, Financial Analyst, and Ex Banker with 15 Years of Professional Experience. Also a Blogger...

Related Post